اے اے اور ٹی ڈی  دو اساتذہ جنھیں بغاوت کے بعد ہونے والے کریک ڈاون کے دوران ملازمت سے بر طرف کر دیا گیا تھا انھیں اتوار کے دن ملاتیا کے ایک اسکول سے اس وقت گرفتار کر لیا گیا جب وہ ایگزیکٹو صدارت کے لیے ہونے والے ریفرینڈم میں ووٹ دینے کے لیے آئے۔

ترک عوام پارلیمانی نظام کو صدارتی نظام سے تبدیل کر دینے کے سوال پر ووٹ ڈال رہے ہیں جس کی کامیابی کے نتیجے میں صدر رجب طیب اردگان مکمل اختیارات کے حامل ہو جایئں گے۔

ملاتیہ پولیس نے دونوں اساتذہ کو گولن تحریک سے رابطوں کے الزام میں گرفتار کر لیا۔

اسی دوران حکومت کی جانب سے 15 جولائی کے بعد اسی نوعیت کے الزامات کے تحت بند کر دیے جانے والے ایک نجی اسکول کے سابق شراکت دار کو بھی ترابزون کے آرسن ڈسترکٹ میں حراست مین لے لیا گیا۔

پولیس نے ایف جی کو ملاتیا میں حراست میں لیا جبکہ چار دیگر افراد کو بھی عدنہ میں پولیس مرکز کے قریب  کالعدم کردستان ورکرز پارٹی (PKK) سے تعلق کے الزام میں گرفتار کر لیا گیا۔