ترک ویٹرنری ڈاکٹر ہارون ورال کی حراست کے دوران کینسر کی تشخیص کی گئی ہے تاہم پراسیکیوٹر نے انھیں سرجری سے قبل ہسپتال میں رہنے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا ہے۔

ارضروم کے رہایشی ویٹرنری ڈاکٹر گولن تحریک کے خلاف تحقیقات کے سلسے میں 23 جنوری سے گرفتار  ہیں جس پر حکومت گذشتہ برس بغاوت کی کوشش کےماسٹر مایئنڈ ہونے کا الزام لگاتی رہی ہے۔

ورال کو پیشاب میں خون آنے پر ہسپتال لے جایا گیا جہاں ان کے بلیڈر میں رسولی کی تشخیص کی گئی ہے۔  ان کا 11 اپریل کو آپریشن کیا جانا ہے اور ڈاکٹروں نے انھیں اس وقت تک ہسپتال میں انتہائی نگہداشت میں رکھنے کی سفارش کی تھی۔

تاہم پراسیکیٹر نوراللہ یسار کے مسلسل اصرار پر انھیں مسلسل خون آنے کے باوجود  28 مارچ کو جیل میں منتقل کر دیا گیا۔

Aktf Haber News Portal Report