گرہٹ نیوز ویب سائٹ کے مطابق چیرمین پارتیا کردستانی (PAKURD) ابراہیم خلیل باران کا کہنا ہے کہ اس پر 13 دن کی حراست کے دوران شدید تشدد روا رکھا گیا۔

باران جسے دہشت گرد تنظیم کا پراپیگنڈہ پھیلانے اور صدر طیب اردگان کی بے عزتی کرنے کے الزام میں11 جنوری کو تحویل میں لیا گیا تھا اور 23 جنوری کو با قاعدہ گرفتار کر لیا گیا تھا، باقاعدہ کارروائی کے بعد 11 اپریل کو رہا کیا گیا۔

“ مجھے 13 دن کی حراست کے دوران شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ میں اپنی رہائی کے بعد سے طبی اور ذہنی علاج کروا رہا ہوں۔ تشدد کے متعلق ہمارے الزامات پر کوئی تفتیش نہیں کی گئی۔  ہائی کورٹ میں بھی ہماری اپیل رد کر دی گئی۔ میرے وکیل آئینی عدالت اور یورپین کورٹ برائے حقوق انسانی میں اپیل دائر کرنے کے متعلق غور کر رہے ہیں۔“ باران نے سوشل میڈیا پیغامات میں بتایا۔

باران نے بتایا کہ ان کے بھائی اور PAKURD سے منسلک سولہ دیگر افراد بھی جیل میں ہیں۔

باران نے اپنے خلاف سیاسی نوعیت کے مختلف نوعیت کے مقدمات کی موجودگی میں دوبارہ حراست کے سخت خطرے کا اظہار کرتے ہوئے کہا: “میں خود کو اتنا مضبوط نہیں سمجھتا کہ تشدد اور جیل میں دیکھی جانے والی دیگر چیزوں کے متعلق کچھ لکھ سکوں۔“

یہ آرٹیکل ترکش منٹ میں پندرہ مئی کو شائع ہوا۔

 

Related News